پرندے لوٹ کے جب گھر کو جانے لگتے ہیں

جمنا پرشاد راہیؔ

پرندے لوٹ کے جب گھر کو جانے لگتے ہیں

جمنا پرشاد راہیؔ

MORE BYجمنا پرشاد راہیؔ

    پرندے لوٹ کے جب گھر کو جانے لگتے ہیں

    ہمیں بھی یاد در و بام آنے لگتے ہیں

    فصیل سرحد ماضی دھڑکنے لگتی ہے

    جو خواب نیند کا در کھٹکھٹانے لگتے ہیں

    حباب دھوپ کی بارش میں پھوٹتے بنتے

    ثبات ذات کا مطلب بتانے لگتے ہیں

    سر محاذ ترے آتے ہی حریف مرے

    یہ میرے ہاتھ مجھے آزمانے لگتے ہیں

    ترے خیال کی محفل جو سجنے لگتی ہے

    قریب حال گزشتہ زمانے لگتے ہیں

    جو آسمان کو ضد ہے تو کم نہیں ہم بھی

    کہ بعد برق نئے گھر بنانے لگتے ہیں

    جو سنتے ہیں کہ ترے شہر میں دسہرا ہے

    ہم اپنے گھر میں دوالی سجانے لگتے ہیں

    سنی سنائی سی ہر اک کہانی لگتی ہے

    نئے ہیں لفظ معانی پرانے لگتے ہیں

    مآخذ :
    • کتاب : Safarguzar (Pg. 121)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY