اشفاق عامر

غزل 3

 

اشعار 4

اپنی خوشی سے مجھے تیری خوشی تھی عزیز

تو بھی مگر جانے کیوں مجھ سے خفا ہو گیا

یہ روگ لگا ہے عجب ہمیں جو جان بھی لے کر ٹلا نہیں

ہر ایک دوا بے اثر گئی ہر ایک دعا بے اثر ہوئی

یہ رات ایسی ہوائیں کہاں سے لاتی ہے

کہ خواب پھولتے ہیں اور زخم پھلتے ہیں

اب اعتبار پہ جی چاہتا تو ہے لیکن

پرانے خوف دلوں سے کہاں نکلتے ہیں

"جھیلم" کے مزید شعرا

  • انعمتا علی انعمتا علی
  • حادث صلصال حادث صلصال
  • سید انصر سید انصر