noImage

عبرت مچھلی شہری

جون پور, انڈیا

عبرت مچھلی شہری

غزل 4

 

اشعار 7

جب آ جاتی ہے دنیا گھوم پھر کر اپنے مرکز پر

تو واپس لوٹ کر گزرے زمانے کیوں نہیں آتے

  • شیئر کیجیے

کیوں پشیماں ہو اگر وعدہ وفا ہو نہ سکا

کہیں وعدے بھی نبھانے کے لئے ہوتے ہیں

  • شیئر کیجیے

زندگی کم پڑھے پردیسی کا خط ہے عبرتؔ

یہ کسی طرح پڑھا جائے نہ سمجھا جائے

  • شیئر کیجیے

اپنی غربت کی کہانی ہم سنائیں کس طرح

رات پھر بچہ ہمارا روتے روتے سو گیا

  • شیئر کیجیے

سنا ہے ڈوب گئی بے حسی کے دریا میں

وہ قوم جس کو جہاں کا امیر ہونا تھا

  • شیئر کیجیے

کتاب 1

 

تصویری شاعری 1

 

"جون پور" کے مزید شعرا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

GET YOUR FREE PASS
بولیے