noImage

مرزا اظفری

مرزا اظفری

غزل 34

اشعار 26

ہم گنہ گاروں کے کیا خون کا پھیکا تھا رنگ

مہندی کس واسطے ہاتھوں پہ رچائی پیارے

  • شیئر کیجیے

ہم فراموش کی فراموشی

اور تم یاد عمر بھر بھولے

تیرے مژگاں کی کیا کروں تعریف

تیر یہ بے کمان جاتا ہے

کون کہتا ہے کہ تو نے ہمیں ہٹ کر مارا

دل جھپٹ آنکھ لڑا نظروں سے ڈٹ کر مارا

  • شیئر کیجیے

اے مصور شتاب ہو کہ ابھی

اس کا نقشہ دھیان میں کچھ ہے

  • شیئر کیجیے

کتاب 3

 

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

بولیے