Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر
Aslam Ansari's Photo'

اسلم انصاری

1939 | ملتان, پاکستان

شاعر اور اردو کے استاد، خواجہ فرید کی کافیوں کا منظوم اردو ترجمہ بھی کیا

شاعر اور اردو کے استاد، خواجہ فرید کی کافیوں کا منظوم اردو ترجمہ بھی کیا

اسلم انصاری کے اشعار

1.7K
Favorite

باعتبار

جانے والے کو کہاں روک سکا ہے کوئی

تم چلے ہو تو کوئی روکنے والا بھی نہیں

کسے کہیں کہ رفاقت کا داغ ہے دل پر

بچھڑنے والا تو کھل کر کبھی ملا ہی نہ تھا

دیوار خستگی ہوں مجھے ہاتھ مت لگا

میں گر پڑوں گا دیکھ مجھے آسرا نہ دے

خفا نہ ہو کہ ترا حسن ہی کچھ ایسا تھا

میں تجھ سے پیار نہ کرتا تو اور کیا کرتا

جسے درپیش جدائی ہو اسے کیا معلوم

کون سی بات کو کس طرح بیاں ہونا ہے

ہمارے ہاتھ فقط ریت کے صدف آئے

کہ ساحلوں پہ ستارہ کوئی رہا ہی نہ تھا

ہم کو پہچان کہ اے بزم چمن زار وجود

ہم نہ ہوتے تو تجھے کس نے سنوارا ہوتا

ذرا سی بات پہ کیا کیا فسانہ سازی ہے

میں خود بھی چاہتا کب تھا کہ داستاں نہ بنے

ہم نے ہر خواب کو تعبیر عطا کی اسلمؔ

ورنہ ممکن تھا کہ ہر نقش ادھورا ہوتا

اڑا ہے رفتہ رفتہ رنگ تصویر محبت کا

ہوئی ہے رسم الفت بے وقار آہستہ آہستہ

رگ ہر ساز یہ کہتی ہے کہ اے نغمہ طراز

مجھ کو اک سلطنت صوت و صدا چاہیے تھی

جوئے نغمات پہ تصویر سی لرزاں دیکھی

لب تصویر پہ ٹھہرا ہوا نغمہ دیکھا

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے