فیض احمد فیض

سب سے پسندیدہ اور مقبول پاکستانی شاعروں میں سے ایک ، اپنے انقلابی خیالات کے سبب کئی برس قید میں رہے

Editor Choiceمنتخب Popular Choiceمقبول
غزلصنف
0 ' ,شرح_فراق مدح_لب_مشکبو کریں (ردیف .. ')0
0 ' ,یاد کا پھر کوئی دروازہ کھلا آخر_شب (ردیف .. ')0
0 ا ,آج یوں موج_در_موج غم تھم گیا اس طرح غم_زدوں کو قرار آ گیا1
0 ا ,چاند نکلے کسی جانب تری زیبائی کا1
0 ا ,راز_الفت چھپا کے دیکھ لیا0
0 ا ,ستم سکھلائے_گا رسم_وفا ایسے نہیں ہوتا0
0 ا ,کچھ پہلے ان آنکھوں آگے کیا کیا نہ نظارا گزرے تھا0
0 ا ,کس حرف پہ تو نے گوشۂ_لب اے جان_جہاں غماز کیا0
0 ا ,کس شہر نہ شہرہ ہوا نادانئ_دل کا0
0 ا ,گو سب کو بہم ساغر و بادہ تو نہیں تھا0
0 ا ,نہ اب رقیب نہ ناصح نہ غم_گسار کوئی (ردیف .. ا)0
0 ا ,نہ گنواؤ ناوک_نیم_کش دل_ریزہ_ریزہ گنوا دیا1
0 ا ,وہ بتوں نے ڈالے ہیں وسوسے کہ دلوں سے خوف_خدا گیا0
0 ا ,یہ کس خلش نے پھر اس دل میں آشیانہ کیا0
0 ح ,یک_بیک شورش_فغاں کی طرح0
0 ر ,''آپ کی یاد آتی رہی رات بھر'' (ردیف .. ر)2
0 ز ,حسن مرہون_جوش_بادۂ_ناز0
0 گ ,یوں سجا چاند کہ جھلکا ترے انداز کا رنگ0
0 م ,جیسے ہم_بزم ہیں پھر یار_طرح_دار سے ہم0
0 م ,رنگ پیراہن کا خوشبو زلف لہرانے کا نام2
0 م ,قرض_نگاہ_یار ادا کر چکے ہیں ہم0
0 م ,یہ جفائے_غم کا چارہ وہ نجات_دل کا عالم0
0 ن ,اب جو کوئی پوچھے بھی تو اس سے کیا شرح_حالات کریں0
0 ن ,تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے لگتے ہیں2
0 ن ,جمے_گی کیسے بساط_یاراں کہ شیشہ و جام بجھ گئے ہیں1
0 ن ,دل میں اب یوں ترے بھولے ہوئے غم آتے ہیں3
0 ن ,سب قتل ہو کے تیرے مقابل سے آئے ہیں0
0 ن ,سبھی کچھ ہے تیرا دیا ہوا سبھی راحتیں سبھی کلفتیں0
0 ن ,صبح کی آج جو رنگت ہے وہ پہلے تو نہ تھی (ردیف .. ن)0
0 ن ,عشق منت_کش_قرار نہیں0
0 ن ,فکر_دل_دارئ_گلزار کروں یا نہ کروں0
0 ن ,کب یاد میں تیرا ساتھ نہیں کب ہات میں تیرا ہات نہیں1
0 ن ,کسی گماں پہ توقع زیادہ رکھتے ہیں0
0 ن ,نصیب آزمانے کے دن آ رہے ہیں2
0 ن ,وفائے_وعدہ نہیں وعدۂ_دگر بھی نہیں1
0 ن ,وہیں ہیں دل کے قرائن تمام کہتے ہیں0
0 ن ,یاد_غزال_چشماں ذکر_سمن_عذاراں1
0 ہ ,تجھے پکارا ہے بے_ارادہ0
0 ہ ,قند_دہن کچھ اس سے زیادہ0
0 و ,عجز_اہل_ستم کی بات کرو0
0 و ,گرمئ_شوق_نظارہ کا اثر تو دیکھو1
0 ے ,اب کے برس دستور_ستم میں کیا کیا باب ایزاد ہوئے0
0 ے ,اب وہی حرف_جنوں سب کی زباں ٹھہری ہے1
0 ے ,آئے کچھ ابر کچھ شراب آئے2
0 ے ,بات بس سے نکل چلی ہے2
0 ے ,بے_دم ہوئے بیمار دوا کیوں نہیں دیتے2
0 ے ,پھر آئینۂ_عالم شاید کہ نکھر جائے0
0 ے ,پھر حریف_بہار ہو بیٹھے0
0 ے ,پھر لوٹا ہے خورشید_جہاں_تاب سفر سے0
0 ے ,تری امید ترا انتظار جب سے ہے1
0 ے ,ترے غم کو جاں کی تلاش تھی ترے جاں_نثار چلے گئے1
0 ے ,تم آئے ہو نہ شب_انتظار گزری ہے2
0 ے ,تیری صورت جو دل_نشیں کی ہے0
0 ے ,چشم_میگوں ذرا ادھر کر دے0
0 ے ,حسرت_دید میں گزراں ہیں زمانے کب سے0
0 ے ,حیراں ہے جبیں آج کدھر سجدہ روا ہے0
0 ے ,دربار میں اب سطوت_شاہی کی علامت (ردیف .. ے)0
0 ے ,دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے3
0 ے ,رہ_خزاں میں تلاش_بہار کرتے رہے0
0 ے ,ستم کی رسمیں بہت تھیں لیکن نہ تھی تری انجمن سے پہلے0
0 ے ,سہل یوں راہ_زندگی کی ہے0
0 ی ,شاخ پر خون_گل رواں ہے وہی0
0 ی ,شام_فراق اب نہ پوچھ آئی اور آ کے ٹل گئی2
0 ی ,شرح_بے_دردئ_حالات نہ ہونے پائی0
0 ے ,شفق کی راکھ میں جل بجھ گیا ستارۂ_شام (ردیف .. ے)0
0 ی ,شیخ صاحب سے رسم_و_راہ نہ کی2
0 ے ,غم_بہ_دل شکر_بہ_لب مست و غزل_خواں چلیے0
0 ے ,کب تک دل کی خیر منائیں کب تک رہ دکھلاؤ_گے2
0 ی ,کب ٹھہرے_گا درد اے دل کب رات بسر ہوگی3
0 ے ,کبھی کبھی یاد میں ابھرتے ہیں نقش_ماضی مٹے مٹے سے0
0 ے ,کچھ دن سے انتظار_سوال_دگر میں ہے0
0 ے ,کچھ محتسبوں کی خلوت میں کچھ واعظ کے گھر جاتی ہے1
0 ے ,کیے آرزو سے پیماں جو مآل تک نہ پہنچے0
0 ی ,کئی بار اس کا دامن بھر دیا حسن_دو_عالم سے (ردیف .. ی)0
0 ے ,گرانئ_شب_ہجراں دو_چند کیا کرتے1
0 ے ,گلوں میں رنگ بھرے باد_نوبہار چلے3
0 ے ,نہ کسی پہ زخم عیاں کوئی نہ کسی کو فکر رفو کی ہے0
0 ی ,نہیں نگاہ میں منزل تو جستجو ہی سہی2
0 ے ,ہر حقیقت مجاز ہو جائے0
0 ے ,ہر سمت پریشاں تری آمد کے قرینے0
0 ے ,ہم پر تمہاری چاہ کا الزام ہی تو ہے3
0 ی ,ہم سادہ ہی ایسے تھے کی یوں ہی پذیرائی0
0 ے ,ہم مسافر یوں_ہی مصروف_سفر جائیں_گے0
0 ے ,ہم نے سب شعر میں سنوارے تھے2
0 ی ,ہمت_التجا نہیں باقی0
0 ی ,ہمیں سے اپنی نوا ہم_کلام ہوتی رہی0
0 ے ,وہ عہد_غم کی کاہش_ہائے_بے_حاصل کو کیا سمجھے0
0 ے ,یہ موسم_گل گرچہ طرب_خیز بہت ہے0
0 ے ,یوں بہار آئی ہے اس بار کہ جیسے قاصد (ردیف .. ے)0
seek-warrow-w
  • 1
arrow-eseek-e1 - 89 of 89 items