Shad Azimabadi's Photo'

شاد عظیم آبادی

1846 - 1927 | پٹنہ, ہندوستان

ممتاز ترین قبل از جدید شاعروں میں نمایاں

ممتاز ترین قبل از جدید شاعروں میں نمایاں

7.4K
Favorite

باعتبار

دل مضطر سے پوچھ اے رونق بزم

میں خود آیا نہیں لایا گیا ہوں

اب بھی اک عمر پہ جینے کا نہ انداز آیا

زندگی چھوڑ دے پیچھا مرا میں باز آیا

خموشی سے مصیبت اور بھی سنگین ہوتی ہے

تڑپ اے دل تڑپنے سے ذرا تسکین ہوتی ہے

تمناؤں میں الجھایا گیا ہوں

کھلونے دے کے بہلایا گیا ہوں

جیسے مری نگاہ نے دیکھا نہ ہو کبھی

محسوس یہ ہوا تجھے ہر بار دیکھ کر

کون سی بات نئی اے دل ناکام ہوئی

شام سے صبح ہوئی صبح سے پھر شام ہوئی

یہ بزم مے ہے یاں کوتاہ دستی میں ہے محرومی

جو بڑھ کر خود اٹھا لے ہاتھ میں مینا اسی کا ہے

ڈھونڈوگے اگر ملکوں ملکوں ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم

جو یاد نہ آئے بھول کے پھر اے ہم نفسو وہ خواب ہیں ہم

سن چکے جب حال میرا لے کے انگڑائی کہا

کس غضب کا درد ظالم تیرے افسانے میں تھا

ہزار شکر میں تیرے سوا کسی کا نہیں

ہزار حیف کہ اب تک ہوا نہ تو میرا

لحد میں کیوں نہ جاؤں منہ چھپائے

بھری محفل سے اٹھوایا گیا ہوں

اظہار مدعا کا ارادہ تھا آج کچھ

تیور تمہارے دیکھ کے خاموش ہو گیا

کہاں سے لاؤں صبر حضرت ایوب اے ساقی

خم آئے گا صراحی آئے گی تب جام آئے گا

جب کسی نے حال پوچھا رو دیا

چشم تر تو نے تو مجھ کو کھو دیا

میں شادؔ تنہا اک طرف اور دنیا کی دنیا اک طرف

سارا سمندر اک طرف آنسو کا قطرہ اک طرف

پروانوں کا تو حشر جو ہونا تھا ہو چکا

گزری ہے رات شمع پہ کیا دیکھتے چلیں

میں حیرت و حسرت کا مارا خاموش کھڑا ہوں ساحل پر

دریائے محبت کہتا ہے آ کچھ بھی نہیں پایاب ہیں ہم

ترا آستاں جو نہ مل سکا تری رہ گزر کی زمیں سہی

ہمیں سجدہ کرنے سے کام ہے جو وہاں نہیں تو کہیں سہی

نگاہ ناز سے ساقی کا دیکھنا مجھ کو

مرا وہ ہاتھ میں ساغر اٹھا کے رہ جانا

عید میں عید ہوئی عیش کا ساماں دیکھا

دیکھ کر چاند جو منہ آپ کا اے جاں دیکھا

بھرے ہوں آنکھ میں آنسو خمیدہ گردن ہو

تو خامشی کو بھی اظہار مدعا کہیے

جیتے جی ہم تو غم فردا کی دھن میں مر گئے

کچھ وہی اچھے ہیں جو واقف نہیں انجام سے

تیرے بیمار محبت کی یہ حالت پہنچی

کہ ہٹایا گیا تکیہ بھی سرہانے والا

غنچوں کے مسکرانے پہ کہتے ہیں ہنس کے پھول

اپنا کرو خیال ہماری تو کٹ گئی

ایک ستم اور لاکھ ادائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

ترچھی نگاہیں تنگ قبائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

ملے گا غیر بھی ان کے گلے بہ شوق اے دل

حلال کرنے مجھے عید کا ہلال آیا

خاروں سے یہ کہہ دو کہ گل تر سے نہ الجھیں

سیکھے کوئی انداز شریفانہ ہمارا

جو تنگ آ کر کسی دن دل پہ ہم کچھ ٹھان لیتے ہیں

ستم دیکھو کہ وہ بھی چھوٹتے پہچان لیتے ہیں

دل اپنی طلب میں صادق تھا گھبرا کے سوئے مطلوب گیا

دریا سے یہ موتی نکلا تھا دریا ہی میں جا کر ڈوب گیا

نظر کی برچھیاں جو سہہ سکے سینا اسی کا ہے

ہمارا آپ کا جینا نہیں جینا اسی کا ہے

ہوں اس کوچے کے ہر ذرے سے آگاہ

ادھر سے مدتوں آیا گیا ہوں

اجل بھی ٹل گئی دیکھی گئی حالت نہ آنکھوں سے

شب غم میں مصیبت سی مصیبت ہم نے جھیلی ہے

نازک تھا بہت کچھ دل میرا اے شادؔ تحمل ہو نہ سکا

اک ٹھیس لگی تھی یوں ہی سی کیا جلد یہ شیشہ ٹوٹ گیا

کہتے ہیں اہل ہوش جب افسانہ آپ کا

ہنستا ہے دیکھ دیکھ کے دیوانہ آپ کا

چمن میں جا کے ہم نے غور سے اوراق گل دیکھے

تمہارے حسن کی شرحیں لکھی ہیں ان رسالوں میں

شب کو مری چشم حسرت کا سب درد دل ان سے کہہ جانا

دانتوں میں دبا کر ہونٹ اپنا کچھ سوچ کے اس کا رہ جانا

دیکھنے والے کو تیرے دیکھنے آتے ہیں لوگ

جو کشش تجھ میں تھی اب وو تیرے دیوانہ میں ہے

طلب کریں بھی تو کیا شے طلب کریں اے شادؔ

ہمیں تو آپ نہیں اپنا مدعا معلوم

تسکین تو ہوتی تھی تسکین نہ ہونے ث

رونا بھی نہیں آتا ہر وقت کے رونے سے

اے شوق پتا کچھ تو ہی بتا اب تک یہ کرشمہ کچھ نہ کھلا

ہم میں ہے دل بے تاب نہاں یا آپ دل بے تاب ہیں ہم

کچھ ایسا کر کہ خلد آباد تک اے شادؔ جا پہنچیں

ابھی تک راہ میں وہ کر رہے ہیں انتظار اپنا