Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر
Manzar Lakhnavi's Photo'

منظر لکھنوی

- 1965

منظر لکھنوی کے اشعار

5.9K
Favorite

باعتبار

درد ہو دل میں تو دوا کیجے

اور جو دل ہی نہ ہو تو کیا کیجے

غم میں کچھ غم کا مشغلا کیجے

درد کی درد سے دوا کیجے

تفریق حسن و عشق کے انداز میں نہ ہو

لفظوں میں فرق ہو مگر آواز میں نہ ہو

غصہ قاتل کا نہ بڑھتا ہے نہ کم ہوتا ہے

ایک سر ہے کہ وہ ہر روز قلم ہوتا ہے

جانے والے جا خدا حافظ مگر یہ سوچ لے

کچھ سے کچھ ہو جائے گی دیوانگی تیرے بغیر

بہکی بہکی نگۂ ناز خدا خیر کرے

حسن میں عشق کے انداز خدا خیر کرے

مدتوں بعد کبھی اے نظر آنے والے

عید کا چاند نہ دیکھا تری صورت دیکھی

پھر منہ سے ارے کہہ کر پیمانہ گرا دیجے

پھر توڑیئے دل میرا پھر لیجئے انگڑائی

کبھی تو اپنا سمجھ کر جواب دے ڈالو

بدل بدل کے صدائیں پکارتا ہوں میں

ایک نعمت ترے مہجور کے ہاتھ آئی ہے

عید کا چاند چراغ شب تنہائی ہے

وہ تو کہئے آپ کی الفت میں دل بہلا رہا

ورنہ دنیا چار دن بھی رہنے کے قابل نہ تھی

ہنسی آنے کی بات ہے ہنس رہا ہوں

مجھے لوگ دیوانہ فرما رہے ہیں

محبت تو ہم نے بھی کی اور بہت کی

مگر حسن کو عشق کرنا نہ آیا

دنیا کو دین دین کو دنیا کریں گے ہم

تیرے بنیں گے ہم تجھے اپنا کریں گے ہم

گھر کو چھوڑا ہے خدا جانے کہاں جانے کو

اب سمجھ لیجئے ٹوٹا ہوا تارا مجھ کو

مجھے مٹا کے وہ یوں بیٹھے مسکراتے ہیں

کسی سے جیسے کوئی نیک کام ہو جائے

مانگنے پر کیا نہ دے گا طاقت صبر و سکون

جس نے بے مانگے عطا کر دی پریشانی مجھے

یہ انسان نادیدہ الفت کا مارا

خدا جانے کس کس کو سجدہ کرے گا

چنے تھے پھول مقدر سے بن گئے کانٹے

بہار ہائے ہمارے لئے بہار نہیں

آپ کی یاد میں روؤں بھی نہ میں راتوں کو

ہوں تو مجبور مگر اتنا بھی مجبور نہیں

ظلم پر ظلم آ گئے غالب

آبلے آبلوں کو چھوڑ گئے

جگمگاتی تری آنکھوں کی قسم فرقت میں

بڑے دکھ دیتی ہے یہ تاروں بھری رات مجھے

دو گھڑی دل کے بہلانے کا سہارا بھی گیا

لیجئے آج تصور میں بھی تنہائی ہے

ہیں سو طریقے اور بھی اے بے قرار دل

اظہار شکوہ شکوے کے انداز میں نہ ہو

مرگ عاشق پہ فرشتہ موت کا بدنام تھا

وہ ہنسی روکے ہوئے بیٹھا تھا جس کا کام تھا

اہل محشر دیکھ لوں قاتل کو تو پہچان لوں

بھولی بھالی شکل تھی اور کچھ بھلا سا نام تھا

مری رات کیوں کر کٹے گی الٰہی

مجھے دن کو تارے نظر آ رہے ہیں

ہم وحشیوں کا مسکن کیا پوچھتا ہے ظالم

صحرا ہے تو صحرا ہے زنداں ہے تو زنداں ہے

مجھے تو بخشئے اور جینے دیجے

مبارک آپ ہی کو آپ کا دل

مٹانے والے ہمارا ہی گھر مٹانا تھا

چمن میں ایک سے ایک اچھا آشیانا تھا

ہوئی دیوانگی اس درجہ مشہور جہاں میری

جہاں دو آدمی بھی ہیں چھڑی ہے داستاں میری

اپنی بیتی نہ کہوں تیری کہانی نہ کہوں

پھر مزہ کاہے سے پیدا کروں افسانے میں

کسی آنکھ میں نیند آئے تو جانوں

مرا قصۂ غم کہانی نہیں ہے

ایک موسیٰ تھے کہ ان کا ذکر ہر محفل میں ہے

اور اک میں ہوں کہ اب تک میرے دل کی دل میں ہے

کیجیے کیوں مردہ ارمانوں سے چھیڑ

سونے والوں کو تو سونے دیجیے

ان سے جب پوچھا گیا بسمل تمہارے کیا کریں

ہنس کے بولے زخم دل دیکھا کریں رویا کریں

اب اتنا عقل سے بیگانہ ہو گیا ہوں میں

گلوں کے شکوے ستاروں سے کہہ رہا ہوں میں

برا ہو عشق کا سب کچھ سمجھ رہا ہوں میں

بنا رہا ہے کوئی بن رہا ہوں دیوانہ

گلوں سے کھیل رہے ہیں نسیم کے جھونکے

قفس میں بیٹھا ہوا ہاتھ مل رہا ہوں میں

نہ دل میں لہو ہے نہ آنکھوں میں آنسو

غموں کی نچوڑی ہوئی آستیں ہوں

کچھ ابر کو بھی ضد ہے منظرؔ مری توبہ سے

جب عہد کیا میں نے گھنگھور گھٹا چھائی

جمع ہم کرتے گئے چن چن کے تنکے باغ میں

اور نہ جانے کس کا کس کا آشیاں بنتا گیا

پوچھنے والے بھری بزم میں قاتل کو نہ پوچھ

نام تیرا ہی اگر لے لیا سودائی نے

قفس میں جب ذرا جھپکی مری آنکھ

یہی دیکھا نشیمن جل رہا ہے

واعظ سے نہ پوچھوں گا کبھی مسئلۂ عشق

میں خوب سمجھتا ہوں جو ارشاد کریں گے

چھڑی ہے آج مجھ سے آسماں سے

ذرا ہٹ جائیے گا درمیاں سے

شب ہجر یوں دل کو بہلا رہے ہیں

کہ دن بھر کی بیتی کو دہرا رہے ہیں

بے خود ایسا کیا خوف شب تنہائی نے

صبح سے شمع جلا دی ترے سودائی نے

سجدے کرتا جا رہا ہوں کوئے جاناں کی طرف

راستہ بتلا رہی ہے میری پیشانی مجھے

عہد شباب رفتہ کیا عہد پر فضا تھا

جینے کا بھی مزا تھا مرنے کا بھی مزا تھا

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے