Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر
Krishn Bihari Noor's Photo'

کرشن بہاری نور

1926 - 2003 | لکھنؤ, انڈیا

مقبول عام شاعر، لکھنوی زبان و تہذیب کے نمائندے

مقبول عام شاعر، لکھنوی زبان و تہذیب کے نمائندے

کرشن بہاری نور کے اشعار

14.3K
Favorite

باعتبار

میں تو غزل سنا کے اکیلا کھڑا رہا

سب اپنے اپنے چاہنے والوں میں کھو گئے

آئنہ یہ تو بتاتا ہے کہ میں کیا ہوں مگر

آئنہ اس پہ ہے خاموش کہ کیا ہے مجھ میں

یہی ملنے کا سمے بھی ہے بچھڑنے کا بھی

مجھ کو لگتا ہے بہت اپنے سے ڈر شام کے بعد

زندگی سے بڑی سزا ہی نہیں

اور کیا جرم ہے پتا ہی نہیں

کیسی عجیب شرط ہے دیدار کے لیے

آنکھیں جو بند ہوں تو وہ جلوہ دکھائی دے

چاہے سونے کے فریم میں جڑ دو

آئنہ جھوٹ بولتا ہی نہیں

اتنے حصوں میں بٹ گیا ہوں میں

میرے حصے میں کچھ بچا ہی نہیں

میں جس کے ہاتھ میں اک پھول دے کے آیا تھا

اسی کے ہاتھ کا پتھر مری تلاش میں ہے

سچ گھٹے یا بڑھے تو سچ نہ رہے

جھوٹ کی کوئی انتہا ہی نہیں

مٹے یہ شبہ تو اے دوست تجھ سے بات کریں

ہماری پہلی ملاقات آخری تو نہیں

ہوس نے توڑ دی برسوں کی سادھنا میری

گناہ کیا ہے یہ جانا مگر گناہ کے بعد

تشنگی کے بھی مقامات ہیں کیا کیا یعنی

کبھی دریا نہیں کافی کبھی قطرہ ہے بہت

کیوں آئینہ کہیں اسے پتھر نہ کیوں کہیں

جس آئینے میں عکس نہ اس کا دکھائی دے

آئنہ یہ تو بتاتا ہے میں کیا ہوں لیکن

آئنہ اس پہ ہے خاموش کہ کیا ہے مجھ میں

اک طرف قانون ہے اور اک طرف انسان ہے

ختم ہوتا ہی نہیں جرم و سزا کا سلسلہ

جتنے موسم ہیں سبھی جیسے کہیں مل جائیں

ان دنوں کیسے بتاؤں جو فضا ہے مجھ میں

ایسا نہ ہو گناہ کی دلدل میں جا پھنسوں

اے میری آرزو مجھے لے چل سنبھال کے

زندگی سے بڑی سزا ہی نہیں

اور کیا جرم ہے پتا ہی نہیں

جیسے ان دیکھے اجالے کی کوئی دیوار ہو

بند ہو جاتا ہے کچھ دوری پہ ہر اک راستا

موسم ہیں دو ہی عشق کے صورت کوئی بھی ہو

ہیں اس کے پاس آئنے ہجر و وصال کے

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے