خود اذیتی پر شاعری

یوں تو بظاہر اپنے آپ کو تکلیف پہنچانا اور اذیت میں مبتلا کرنا ایک نہ سمجھ میں آنے والا غیر فطری عمل ہے ، لیکن ایسا ہوتا ہے اور ایسے لمحے آتے ہیں جب خود اذیتی ہی سکون کا باعث بنتی ہے ۔ لیکن ایسا کیوں ؟ اس سوال کا جواب آپ کو شاعری میں ہی مل سکتا ہے ۔ خود اذیتی کو موضوع بنانے والے اشعار کا ایک انتخاب ہم پیش کر رہے ہیں ۔

مصحفیؔ ہم تو یہ سمجھے تھے کہ ہوگا کوئی زخم

تیرے دل میں تو بہت کام رفو کا نکلا

مصحفی غلام ہمدانی

سفر میں ہر قدم رہ رہ کے یہ تکلیف ہی دیتے

بہر صورت ہمیں ان آبلوں کو پھوڑ دینا تھا

انجم عرفانی

ایسا کروں گا اب کے گریباں کو تار تار

جو پھر کسی طرح سے کسی سے رفو نہ ہو

شیخ ظہور الدین حاتم

رفو نہ کر اسے اے بخیہ گر خدا کے لیے

کہ چاک دل سے ہوا خوش گوار آتی ہے

جلیل مانک پوری

نہ رہا کوئی تار دامن میں

اب نہیں حاجت رفو مجھ کو

اقبال سہیل

کیا ہے چاک دل تیغ تغافل سیں تجھ انکھیوں نیں

نگہ کے رشتہ و سوزن سوں پلکاں کے رفو کیجے

آبرو شاہ مبارک