Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر
Aziz Hamid Madni's Photo'

عزیز حامد مدنی

1922 - 1991 | کراچی, پاکستان

نئی اردو شاعری کی ممتاز شخصیت، ان کی کئی غزلیں گائی گئی ہیں

نئی اردو شاعری کی ممتاز شخصیت، ان کی کئی غزلیں گائی گئی ہیں

عزیز حامد مدنی کے اشعار

919
Favorite

باعتبار

جو بات دل میں تھی اس سے نہیں کہی ہم نے

وفا کے نام سے وہ بھی فریب کھا جاتا

میری وفا ہے اس کی اداسی کا ایک باب

مدت ہوئی ہے جس سے مجھے اب ملے ہوئے

خوں ہوا دل کہ پشیمان صداقت ہے وفا

خوش ہوا جی کہ چلو آج تمہارے ہوئے لوگ

مانا کہ زندگی میں ہے ضد کا بھی اک مقام

تم آدمی ہو بات تو سن لو خدا نہیں

طلسم خواب زلیخا و دام بردہ فروش

ہزار طرح کے قصے سفر میں ہوتے ہیں

خدا کا شکر ہے تو نے بھی مان لی مری بات

رفو پرانے دکھوں پر نہیں کیا جاتا

وہ لوگ جن سے تری بزم میں تھے ہنگامے

گئے تو کیا تری بزم خیال سے بھی گئے

کچھ اب کے ہم بھی کہیں اس کی داستان وصال

مگر وہ زلف پریشاں کھلے تو بات چلے

غم حیات و غم دوست کی کشاکش میں

ہم ایسے لوگ تو رنج و ملال سے بھی گئے

کہہ سکتے تو احوال جہاں تم سے ہی کہتے

تم سے تو کسی بات کا پردا بھی نہیں تھا

خلل پذیر ہوا ربط مہر و ماہ میں وقت

بتا یہ تجھ سے جدائی کا وقت ہے کہ نہیں

الگ سیاست درباں سے دل میں ہے اک بات

یہ وقت میری رسائی کا وقت ہے کہ نہیں

صبح سے چلتے چلتے آخر شام ہوئی آوارۂ دل

اب میں کس منزل میں پہنچا اب گھر کتنی دور رہا

بیٹھو جی کا بوجھ اتاریں دونوں وقت یہیں ملتے ہیں

دور دور سے آنے والے رستے کہیں کہیں ملتے ہیں

کاذب صحافتوں کی بجھی راکھ کے تلے

جھلسا ہوا ملے گا ورق در ورق ادب

بہار چاک گریباں میں ٹھہر جاتی ہے

جنوں کی موج کوئی آستیں میں ہوتی ہے

ابھی تو کچھ لوگ زندگی میں ہزار سایوں کا اک شجر ہیں

انہیں کے سایوں میں قافلے کچھ ٹھہر گئے بے قیام کہنا

دو گز زمیں فریب وطن کے لیے ملی

ویسے تو آسماں بھی بہت ہیں زمیں بہت

شہر جن کے نام سے زندہ تھا وہ سب اٹھ گئے

اک اشارے سے طلب کرتا ہے ویرانہ مجھے

زہر کا جام ہی دے زہر بھی ہے آب حیات

خشک سالی کی تو ہو جائے تلافی ساقی

دلوں کی عقدہ کشائی کا وقت ہے کہ نہیں

یہ آدمی کی خدائی کا وقت ہے کہ نہیں

گہرے سرخ گلاب کا اندھا بلبل سانپ کو کیا دیکھے گا

پاس ہی اگتی ناگ پھنی تھی سارے پھول وہیں ملتے ہیں

کھلا یہ دل پہ کہ تعمیر بام و در ہے فریب

بگولے قالب دیوار و در میں ہوتے ہیں

نرمی ہوا کی موج طرب خیز ابھی سے ہے

اے ہم صفیر آتش گل تیز ابھی سے ہے

حسن کی شرط وفا جو ٹھہری تیشہ و سنگ گراں کی بات

ہم ہوں یا فرہاد ہو آخر عاشق تو مزدور رہا

سلگ رہا ہے افق بجھ رہی ہے آتش مہر

رموز ربط گریزاں کھلے تو بات چلے

مہک میں زہر کی اک لہر بھی خوابیدہ رہتی ہے

ضدیں آپس میں ٹکراتی ہیں فرق مار و صندل کر

وقت ہی وہ خط فاصل ہے کہ اے ہم نفسو

دور ہے موج بلا اور کنارے ہوئے لوگ

ان کو اے نرم ہوا خواب جنوں سے نہ جگا

رات مے خانے کی آئے ہیں گزارے ہوئے لوگ

وفا کی رات کوئی اتفاق تھی لیکن

پکارتے ہیں مسافر کو سائباں کیا کیا

طلسم شیوۂ یاراں کھلا تو کچھ نہ ہوا

کبھی یہ حبس دل و جاں کھلے تو بات چلے

صدیوں میں جا کے بنتا ہے آخر مزاج دہر

مدنیؔ کوئی تغیر عالم ہے بے سبب

ایسی کوئی خبر تو نہیں ساکنان شہر

دریا محبتوں کے جو بہتے تھے تھم گئے

مبہم سے ایک خواب کی تعبیر کا ہے شوق

نیندوں میں بادلوں کا سفر تیز ابھی سے ہے

مرا چاک گریباں چاک دل سے ملنے والا ہے

مگر یہ حادثے بھی بیش و کم ہوتے ہی رہتے ہیں

جب آئی ساعت بے تاب تیری بے لباسی کی

تو آئینے میں جتنے زاویے تھے رہ گئے جل کر

ایک طرف روئے جاناں تھا جلتی آنکھ میں ایک طرف

سیاروں کی راکھ میں ملتی رات تھی اک بے داری کی

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے