ADVERTISEMENT

اشعار پرفلک

مت سہل ہمیں جانو پھرتا ہے فلک برسوں

تب خاک کے پردے سے انسان نکلتے ہیں

میر تقی میر

ادھر فلک کو ہے ضد بجلیاں گرانے کی

ادھر ہمیں بھی ہے دھن آشیاں بنانے کی

نامعلوم

گنگناتی ہوئی آتی ہیں فلک سے بوندیں

کوئی بدلی تری پازیب سے ٹکرائی ہے

قتیل شفائی

وہ چار چاند فلک کو لگا چلا ہوں قمرؔ

کہ میرے بعد ستارے کہیں گے افسانے

قمر جلالوی
ADVERTISEMENT

فلک پر اڑتے جاتے بادلوں کو دیکھتا ہوں میں

ہوا کہتی ہے مجھ سے یہ تماشا کیسا لگتا ہے

عبد الحمید

دولت کا فلک توڑ کے عالم کی جبیں پر

مزدور کی قسمت کے ستارے نکل آئے

نشور واحدی

آنسو فلک کی آنکھ سے ٹپکے تمام رات

اور صبح تک زمین کا آنچل بھگو گئے

ظہیر احمد ظہیر

فلک کی خبر کب ہے نا شاعروں کو

یوں ہی گھر میں بیٹھے ہوا باندھتے ہیں

مصحفی غلام ہمدانی
ADVERTISEMENT