aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

استاد پر اشعار

استاد کو موضوع بنانے

والے یہ اشعار استاد کی اہمیت اور شاگرد و استاد کے درمیان کے رشتوں کی نوعیت کو واضح کرتے ہیں یہ اس بات پر بھی روشنی ڈالتے ہیں کہ نہ صرف کچھ شاگردوں کی تربیت بلکہ معاشرتی اور قومی تعمیر میں استاد کا کیا رول ہوتا ہے ۔ اس شاعری کے اور بھی کئی پہلو ہیں ۔ ہمارا یہ انتخاب پڑھئے ۔

ماں باپ اور استاد سب ہیں خدا کی رحمت

ہے روک ٹوک ان کی حق میں تمہارے نعمت

الطاف حسین حالی

جن کے کردار سے آتی ہو صداقت کی مہک

ان کی تدریس سے پتھر بھی پگھل سکتے ہیں

نامعلوم

شاگرد ہیں ہم میرؔ سے استاد کے راسخؔ

استادوں کا استاد ہے استاد ہمارا

راسخ عظیم آبادی

ادب تعلیم کا جوہر ہے زیور ہے جوانی کا

وہی شاگرد ہیں جو خدمت استاد کرتے ہیں

چکبست برج نرائن

دیکھا نہ کوہ کن کوئی فرہاد کے بغیر

آتا نہیں ہے فن کوئی استاد کے بغیر

نامعلوم

وہی شاگرد پھر ہو جاتے ہیں استاد اے جوہرؔ

جو اپنے جان و دل سے خدمت استاد کرتے ہیں

لالہ مادھو رام جوہر

رہبر بھی یہ ہمدم بھی یہ غم خوار ہمارے

استاد یہ قوموں کے ہیں معمار ہمارے

نامعلوم

اب مجھے مانیں نہ مانیں اے حفیظؔ

مانتے ہیں سب مرے استاد کو

حفیظ جونپوری

استاد کے احسان کا کر شکر منیرؔ آج

کی اہل سخن نے تری تعریف بڑی بات

منیرؔ  شکوہ آبادی

محروم ہوں میں خدمت استاد سے منیرؔ

کلکتہ مجھ کو گور سے بھی تنگ ہو گیا

منیرؔ  شکوہ آبادی

کس طرح امانتؔ نہ رہوں غم سے میں دلگیر

آنکھوں میں پھرا کرتی ہے استاد کی صورت

امانت لکھنوی

مدرسہ میرا میری ذات میں ہے

خود معلم ہوں خود کتاب ہوں میں

ساقی امروہوی

فلسفے سارے کتابوں میں الجھ کر رہ گئے

درس گاہوں میں نصابوں کی تھکن باقی رہی

نصیر احمد ناصر

مجھ سے جو چاہئے وہ درس بصیرت لیجے

میں خود آواز ہوں میری کوئی آواز نہیں

اصغر گونڈوی

یہ فن عشق ہے آوے اسے طینت میں جس کی ہو

تو زاہد پیر نابالغ ہے بے تہہ تجھ کو کیا آوے

میر تقی میر

اہل بینش کو ہے طوفان حوادث مکتب

لطمۂ موج کم از سیلئ استاد نہیں

مرزا غالب

سچ یہ ہے ہم ہی محبت کا سبق پڑھ نہ سکے

ورنہ ان پڑھ تو نہ تھے ہم کو پڑھانے والے

انور جمال انور

اساتذہ نے مرا ہاتھ تھام رکھا ہے

اسی لئے تو میں پہنچا ہوں اپنی منزل پر

اسحاق وردگ

شاگرد طرز خندہ زنی میں ہے گل ترا

استاد عندلیب ہیں سوز و فغاں میں ہم

حیدر علی آتش

پڑھنے والا بھی تو کرتا ہے کسی سے منسوب

سبھی کردار کہانی کے نہیں ہوتے ہیں

ناظر وحید

ہے اور علم و ادب مکتب محبت میں

کہ ہے وہاں کا معلم جدا ادیب جدا

شیخ ابراہیم ذوقؔ

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے