استقبال کے لیے ۲۰ بہترین اشعار


info iconمعنی کے لئے لفظ پر کلک کیجئے


آپ آئے ہیں سو اب گھر میں اجالا ہے بہت


کہیے جلتی رہے یا شمع بجھا دی جائے

بجھتے ہوئے چراغ فروزاں کریں گے ہم


تم آؤگے تو جشن چراغاں کریں گے ہم

دیر لگی آنے میں تم کو شکر ہے پھر بھی آئے تو


آس نے دل کا ساتھ نہ چھوڑا ویسے ہم گھبرائے تو

گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے


چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے

ہر گلی اچھی لگی ہر ایک گھر اچھا لگا


وہ جو آیا شہر میں تو شہر بھر اچھا لگا

ہر طرح کی بے سر و سامانیوں کے باوجود


آج وہ آیا تو مجھ کو اپنا گھر اچھا لگا

اتنے دن کے بعد تو آیا ہے آج


سوچتا ہوں کس طرح تجھ سے ملوں

جس بزم میں ساغر ہو نہ صہبا ہو نہ خم ہو


رندوں کو تسلی ہے کہ اس بزم میں تم ہو

خوش آمدید وہ آیا ہماری چوکھٹ پر


بہار جس کے قدم کا طواف کرتی ہے

قدم قدم پہ بچھے ہیں گلاب پلکوں کے


چلے بھی آؤ کہ ہم انتظار کرتے ہیں

رونق بزم نہیں تھا کوئی تجھ سے پہلے


رونق بزم ترے بعد نہیں ہے کوئی

سو چاند بھی چمکیں گے تو کیا بات بنے گی


تم آئے تو اس رات کی اوقات بنے گی

شکریہ تیرا ترے آنے سے رونق تو بڑھی


ورنہ یہ محفل جذبات ادھوری رہتی

سنتا ہوں میں کہ آج وہ تشریف لائیں گے


اللہ سچ کرے کہیں جھوٹی خبر نہ ہو

تم آ گئے ہو، تو کچھ چاندنی سی باتیں ہوں


زمیں پہ چاند کہاں روز روز اترتا ہے

تم جو آئے ہو تو شکل در و دیوار ہے اور


کتنی رنگین مری شام ہوئی جاتی ہے

اس نے وعدہ کیا ہے آنے کا


رنگ دیکھو غریب خانے کا

وہ آئے گھر میں ہمارے خدا کی قدرت ہے


کبھی ہم ان کو کبھی اپنے گھر کو دیکھتے ہیں

یہ انتظار کی گھڑیاں یہ شب کا سناٹا


اس ایک شب میں بھرے ہیں ہزار سال کے دن

یہ کس زہرہ جبیں کی انجمن میں آمد آمد ہے


بچھایا ہے قمر نے چاندنی کا فرش محفل میں


ہمیں اپنی روز مرہ کی زندگی میں کسی نہ کسی عزیز اور دل کے قریب شخص کا استقبال کرنا ہی پڑتا ہے۔ لیکن ایسے موقعے پر وہ مناسب لفظ اور جملے نہیں سوجھتے جو اس کی آمد پر اس کے استقبال میں کہے جاسکیں۔ اگر آپ بھی کبھی اس پریشانی اور الجھن سے گزرے ہیں یا گزر رہے ہیں تو استقبال کے موضوع پر کی جانے والی شاعری کا ہمارا یہ انتخاب آپ کے لیے مدد گار ثابت ہوگا۔

comments powered by Disqus